شعر، عروض، اوزان، تقطیع،شعریت

رفیع رضا

شعر، شعریت، شاعری۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان تینوں چیزوں کی کوئی عالمی تعریف متعین کرنےمیں تمام زبانوں کے ادب ناکام ھو گئے ھیں۔۔۔جدیدیت کے نام پر کلاسیکی درجہ بندی کو قریبآ ۷۰ برس پہلے دنیا بھر میں چیلینج کر دیا گیا تھا۔۔۔اسی طرح جب فرانس میں کہا گیا کہ دیکھو انگریزی شاعری کو آج، بلینک ورس کے نام پر قتل کر دیا گیا ھے۔۔اب یہ قتل، مذھب کی طرح اردو مین بھی جاری و ساری ھے اور ایسی بھانت بھانت کی بولیاں سننے کو مِل رھی ھین کہ الاماں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی پُوچھے کہ جب نثری ۔یا نثر پارہ، شاعری کی مَد میں داخل کردیا جائے تو ایرانی و عربی اصنافِ سخن ، مثنوی، قصیدہ، منقبت، غزل، وغیرہ کی کیا وقعت باقی رَہ گئی ھے۔۔۔۔۔۔۔۔اردو ، فارسی اور عربی شاعری ھاتھ سے ھاتھ ملائے چلتے ھین ۔۔اور وجہ ظاھر ھے عروض کی زیادہ تر ھم آھنگی ھے۔۔۔ھم آھنگی ھیئت مین ھو یا خٓاصیت میں دونوں کو جُدا جدا دیکھا جا سکتا ھے۔۔۔جب امرا لقیس کو خاتم الشعرا کہا جاتا تھا تو یہ شاعر مقدمہ شعر و شاعری۔۔پڑھ کر شاعری نہین کرتا تھا۔۔۔شاعری میں اصناف کبھی پہلے نہین بنیں شاعری ھمیشہ پہلے تھی۔۔۔اصناف زیادہ تر انہوں نے بنائیں جو خود شاعری کے قابل نہ تھے یا شاعری مین غیر شاعر کی حد تک شاعر تھے۔۔۔۔جیسے ھمارے شمس الرحمن فاروقی صاحب ، میر کا مقدمہ تو لکھ سکتے ھین لیکن ایک شعر ایسا نہین کہہ سکتے جو طبعِ رواں سے اُٹھایا گیا ھو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں؟؟؟ ایسا کیوں ھے ؟؟۔ْ۔۔۔۔۔۔۔ایسا اس لئے ھے کہ واپس خاتم الشعرا کی طرف چلئیے۔۔۔امرا القیس نے شعر کی اصناف متعین کر کے شاعری نہین کی تھی۔۔۔۔۔۔۔اصناف کو متعین کر کے جو شاعری کی جاتی ھے سوائے گنے چُنے شُعرا کے وُہ سب شاعری کلیشے کے کھاتے مین جاتی ھے۔۔۔۔چونکہ اردو ادب مین تعمیری تنقید کا سوال ھی پیدا نہین ھُوا اسی لئے توصیفی تنقید نے اصنافی شاعری کی ھر بونگی برداشت کی ھےمرثیہ۔۔کو دیکھ لیں۔۔۔دنیائے عالم مین ۔۔اردو ادب کے لئے۔۔۔۔سوائے کربلا کے کُچھ موجود ھی نہین ۔۔۔اور جو موجود ھے وُہ کربلا کا کلیشے ھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کلیشے۔۔۔۔معنوی سطح پر تو کلیشے ھے ھی۔۔۔۔ھیئتی سطح پر بھی کلیشے ایسا بن جاتا ھے جب معنوی اور ھیئتی دونوں سطحیں رسمی طور پر اختیار کی جائیں۔۔۔۔۔مثلا غالب کے قصیدے بنام بادشاھان وقت، اور علامہ اقبال کا مرثیہ بنام ملکہ وکٹوریہ ۔۔ایک غلیظ قَے سے بڑھ کر ادب مین کوئی مقام نہین رکھتے۔۔۔۔۔جب اقبال کہتا ھے کہ اے ملکہ وکٹوریہ تیرے مرنے کا دن کربلا سے بڑا ھے۔۔۔اور عید ایک نحوست ھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔میر انیس کربلا کو دو جہان کا سب سے بڑا واقعہ قرار دیتا ھے۔۔۔۔۔۔سوال تو قاری کا ھے قاری کہاں جائے گا۔۔۔زورِ بیان،،،،،کیا علمی ، عقلی غرابت کا اعلان ھوتا ھے؟؟؟۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پس ان سوالوں کے ساتھ عرض کردُوں کہ اردو کی پوتھی میں اصناف کی تعداد اور ھیئت و بحور متیعین کرنے والوں کا درسی حصہ ھو تو ھو۔۔۔۔۔ادبی حصہ ندارد ھے ۔۔۔۔۔میں کبھی صنف کو سامنے رکھ کر شاعری نہیں کرتا۔۔۔اسی لئے مُجھے طرحی مشاعرے سے نفرت ھے حالنکہ میں فی البدیہہ شاعری فیس بُک پر کر کے ضائع کردیتا ھُوں ۔۔صنف کو نشانہ بنا کر ، یا طرحی مصرعے کو نشانہ بنا کر شاعری کرنا لفظی مُشت زنی ھے اس بحرِ خشک کو شاعری کا عطر کہنے والا اپنے خیال پر نظرِ ثانی کرے۔۔۔غلطی کسی کو بھی لگ سکتی ھے اور اردو کے بیشتر نقاد اور سمجھنے والے مسلسل غلطی پر ھین۔۔۔
اردو فارسی عربی شاعری کے کچھ رموز یہ ہیں
۱۔ فعولن
۲۔ فاعلن
۳۔ مفاعیلن
۴۔ فاعلاتن
۵۔ مستفعلن
۶۔ مفعولات
۷۔ متفاعلن
۸۔ مفاعلتن
انہیں آٹھ افاعیل کی مخلتف ترتیبوں سے بحریں بنتی ہیں، اور ان بحروں میں شعر کہنا لازم ہوتا ہے۔
کچھ مفرد بحریں ہوتی ہیں کہ جن میں ایک ہی افاعیل کی تکرار ہوتی ہے جیسے بحر متقارب (جو اس تھریڈ میں تفصیل سے زیرِ بحث رہی ہے) اس میں فعولن کی تکرار ہے یعنی مثمن میں فعولن فعولن فعولن فعولن ہے۔ جو بھی شعر ان افاعیل کے وزن پر کہا جائے گا اسے بحر متقارب میں کہا ہوا شعر کہیں گے۔
اسی طرح ایک اور مفرد بحر ہے، بحر ہزج اس میں مفاعیلن کی تکرار ہوتی ہے (بحر ہزج مثمن سالم کا وزن ہوگا، مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن)۔
کچھ مرکب بحریں ہوتی ہیں جن میں ایک افاعیل کی بجائے دو اراکین کی تکرار ہوتی ہے جیسے بحر مضارع مثمن سالم کا وزن ہے مفاعیلن فاعلاتن مفاعیلن فاعلاتن، یعنی اس میں دو مختلف افاعیل آ گئے ہیں سو مرکب ہے۔
اس طرح کل ملا کر (مفرد اور مرکب) انیس بحریں بنتی ہیں جن میں سے کچھ اردو میں استعمال ہوتی ہیں اور کچھ نہیں ہوتیں جیسے بحر وافر جو کہ مفرد بحر ہے اور اسکا وزن مفاعلتن مفاعلتن مفاعلتن مفاعلتن ہے لیکن اردو میں اس میں شعر نہیں کہے جاتے کہ اسکا مزاج سراسر عربی اور فارسی کا ہے، اور اگر اردو میں کوئی شعر ہے بھی تو بطور مثال کے۔
لیکن بات یہیں ختم نہیں ہوتی۔
اوپر جو آٹھ افاعیل دیئے گئے ہیں ان میں ایک خاص ترتیب اور انداز سے حروف کی کمی بیشی کرنے سے کچھ نئے وزن اور افاعیل حاصل ہوتے ہیں، اس کمی بیشی کے عمل کو زحاف یا زحافات کہتے ہیں اور ان سے بے شمار اوزان اور بے شمار بحریں حاصل ہوتی ہیں اور یہی عروض کا مشکل ترین حصہ ہے۔ اور ہر زحاف اور ہر بحر کا ایک الگ نام بھی ہوتا ہے۔
مثال کے طور پر ایک رکن ‘مفاعیلن’ پر زحافات کے عمل سے اٹھارہ نئ صورتیں حاصل ہوتی ہیں اور ان سے بننے والی بحر ہزج کے 35 ذیلی صورتیں بحر الفصاحت میں بیان کی گئی ہیں۔
کچھ مثالیں لکھتا ہوں۔
مفاعیلن کے اگر آخری دو حرف گرا دیں تو اس زحاف کو حذف کہتے ہیں، اسے سے ‘مفاعی’ بچتا ہے جسے فعولن بنا لیتے ہیں۔
اگر پہلا حرف ‘م’ ختم کر دیں تو فاعیلن بچتا ہے جسے ‘مفعولن’ بنا لیتے ہیں۔ (اس زخاف کو خرم بروزنِ شرم کہتے ہیں)
اسی طرح مفاعیلن پر زحافات کے عمل سے جو وزن حاصل ہوتے ہیں ان میں، مفاعیل، مفاعلن، فاعلن، مفعول، فعول، فعل، فاع، فع، مفاعیلان، مفعولان، فعلن وغیرہ وغیرہ حاصل ہوتے ہیں اور پھر ان سے بحریں بنتی ہیں جیسے
مفعول مفاعیلن مفعول مفاعیلن
مفاعلن مفاعیلن مفاعلن مفاعیلن
فاعلن مفاعیلن فاعلن مفاعیلن
مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن
مفعول مفاعیل مفاعیل مفاعیل
وغیرہ وغیرہ
مزید برآں، اسی ایک رکن ‘مفاعیلن’ کی مختلف صورتوں (یعنی بحر ہزج ہی سے) رباعی کے چوبیس وزن بھی نکلتے ہیں۔
اور یوں آٹھ افاعیل کی مختلف صورتوں سے سینکڑوں بحریں بنتی ہیں، لیکن عملی طور پر، ایک رپورٹ کے مطابق، صرف ساٹھ ستر بحریں ہی عربی، فارسی اور اردو شاعروں کے مستقل استعمال میں رہی ہیں۔ اردو شاعری کی تاریخ میں تقریباً چالیس بحریں استعمال ہوئی ہیں، اور دیوانِ غالب میں غالب کے استعمال میں آنے والی بحروں کی تعداد انیس یا بیس ہے
بہت سے نئے لکھنے والے۔۔۔ عروض۔۔اور شعروں کے اوزان کے بارے میں پوچھتے ھیں۔یہ نوٹس پڑھ لیں۔۔۔
نوٹ۔۔۔ یہ پرانے کچھ نوٹس اکٹھے کئے ھیں اس میں اگر کسی کے کام کی کوئی چیز ھے تو بغیر شکریہ وہ لے لے۔۔۔ اصل میں بنیادی اکاونٹ بلاک ھونے سے تمام لکھا شاعری اور مضامین غتر بود ھو گئے ھیں۔۔ جو جہاں سے ملے گا اس میں شامل کرتا جاوں گا۔۔

رموزِ شاعری،،،اور مزید نوٹس،،،،،،رفیع رضا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
علم البیان کی ایک صورت شاعری ھے۔۔
شاعری ۔۔۔۔شعر سے نکلا ھے۔۔۔۔جس کا مفہوم۔۔۔۔ معنی کسی چیز کے جاننے پہچاننے اور واقفیت کے ہیں۔
لیکن اصطلاحاً شعر اس کلامِ موزوں کو کہتے ہیں جو قصداً۔۔۔کوشش کر کے کہا جائے۔
یہ کلام موزوں جذبات اور احساسات کے طابع ہوتا ہے۔
اور کسی واقع کی طرف جاننے کا اشارہ کرتا ہے۔
ایسا بھی ہو سکتا ہے کہ آپ نےکوئی حادثہ دیکھا ہو اور وہ آپ کے دل پر اثر کر گیا ہو اور آپ کے اندر سے خود بخود الفاظ کی صورت میں ادا ہو جائے
اس اثر کے بیان کو شعر کہتے ہیں اور انہی شعروں کو شاعری کے نام سے جانا جاتا ہے۔مغرب میں نثری نظم کا آغاز انیسویں صدی میں فرانس میں اور بعدمیں امریکہ میں اسے بہت فروغ حاصل ہوا۔ اردو میں مختلف ہیئتوں سے نثری نظم کی مثالیں بیسویں صدی کی تیسری دہائی سے ملنا شروع ہو جاتی ہیں۔ ایک ادبی تحریک کے طور پر اس کا باقاعدہ آغاز ساٹھ کی دہائی سے ہوا۔ لیکن لگ بھگ چار دہائیاں گزر جانے کے بعد بھی نثری شاعری کا یہ تجربہ اردو نظم میںعمومی قبولیت کے مقام تک نہ پہنچ سکا اور نثری نظم کا ” دور اول ” بالعموم کامیابی سے ہمکنار نہ ہو سکا۔
نثری نظم کےاول دور میں زیادہ تر وہ شعرا تھے جو جدید تر شعری حسیات اور عصری ادبی شعور رکھنے کے ساتھ ساتھ اردو کی کلاسیکی شعری روایات سے بھی مربوط و منسلک تھے اور فن شعر گوئی یعنی اوزان و بحور پر بھی قدرے گرفت رکھتےتھے ۔لیکن بعد میں اسی طرح جیسے امریکہ میں ہُوا اوزان اور بحور سے ناواقف افراد کا جم غفیر نثری نظم پر پل پڑا۔پھر انٹرنیٹ کی آسانی سے فائدہ اُٹھاتے ہُوئے مغرب کی نثری شاعری کے بغیر حوالہ دیئے ترجمہ جات پر مبنی نثری شاعری پاکستانی خود ساختہ نثری شاعروں کی کاوشوں کی صورت میں جگہ جگہ دکھائی دینے لگی –
نثری نظم کے حق میں بولنے والوں کی دلیلیں ایسی ہیں کہ ہنسی چھوٹ جاتی ہے، مثال کے طورنثری نظم میں ایک اندرونی آھنگ ہوتا ہے، نثری نظم تہذیب کی آگہی کے بغیر نہیں لکھی جاسکتی- غرض جتنے مُنہ اُتنی بے بُنیاد اور ہوائی باتیں۔
میرے نزدیک ایسی کسی صنف میں اظہار پر تو کوئی اعتراض نہیں لیکن اس کے نام کا مسئلہ درپیش ہے۔
شعر و ادب کا ماخذ چاہے کسی بھی زبان سے نسبت رکھتا ہو، حتمی تخلیقی معیار کی قدر و تعین کے لئے اسے با لآخر اسی زبان کے حوالے سے دیکھا اور پرکھا جانا چاہیئے جس میں وہ تخلیق کیا گیا ہو۔ چنانچہ اردو نثری نظم کو بھی سنسکرت، ہندی، فرانسیسی اور انگریزی زبان و ادب کی کسوٹی پر پرکھنے کی بجائے، اردو زبان کے سانچوں میں ڈھال کر دیکھنا ضروری ہے

شاعری کے اوزان کا سبق۔۔یاد دھانی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پُرانی تمام کلاسوں کا اعادہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاعری میں ایک اندرونی موسیقی سموئی جاتی ھے جس کو وزن، یا بحر کہتے ھیں۔۔۔وزن یا بحر، ایک اندونی ردھم ھے بیرونی طور پر اس کو پرکھنا یا جانچنا ، عروض کہلاتا ھے۔۔۔۔۔۔
اس اندرونی ردھم کو حساب سے تصویر سے یا الفاظ سے ظآھر کیا جا سکتا ھے۔۔۔۔الفاظ کوئی بھی بے معنی استعمال کئے جا سکتے ھیں۔۔اصل نُکتہ یہ ھے کہ۔۔۔الفاظ میں ۔ متحرک ، اور ساکن حروف کی پہچان ھو۔۔۔
ؔؔ@@@متحرک اُس حرف کو کہتے ھیں ۔۔۔جس پر زبر، زیر، یا پیش ھو۔۔
@@@ ساکن ۔حرف وُہ ھوتا ھے جس پر جزم ھو۔۔۔
جیسے ۔۔۔۔پَر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس میں پ پر زبر ھے۔۔۔پَ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ر۔۔۔پر جزم ھے۔۔
اس لئے۔۔۔۔۔۔قاعدہ یہ ھوا کہ۔۔۔۔
متحرک +ساکن۔۔۔
اب اس کی مثال دیکھیں جن میں یہ کُلیہ استعمال ھو۔۔
جَا،،،،،،لَا،،،،ھَے۔۔۔۔۔تُو۔۔۔۔۔۔ھَم۔۔۔۔سَن۔۔۔۔۔۔۔۔لو۔۔۔۔۔دو۔۔۔پا۔۔۔۔جی۔۔۔۔۔اُس۔۔اِس۔۔۔اُن۔۔۔جَل، کَل۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر ھم آٹھ بار۔۔۔۔متحرک+ساکن کا ایک کُلیہ۔۔یا بحر۔۔یا وزن بنا لیں تو۔۔۔۔۔
متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن
متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن
اب مندرجہ بالا چار ارکان۔۔۔۔۔ھُوئے۔۔۔ان ارکان کے وزن یا ردھم کے مطابق کُچھ لکھیں
ھم تُم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مِل کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بولے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بابا
متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن
متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔+متحرک+ساکن
ھم=متحرک+ساکن۔۔====ھَ م۔۔
تُم=متحرک+ساکن۔۔===تُ م۔۔۔
۔مِل=متحرک+ساکن=== مِ ل۔۔۔
کَر===متحرک+ساکن== کَر۔۔۔
آپ نے غور کیا۔۔۔؟۔۔۔۔اب اگلا قدم۔۔۔۔۔لیکن اگر سمجھ نہیں آئی تو پھر پڑھیں۔۔دُنیائے اُردو میں اس سے آسان طریق کسی نے اختیار نہ کیا ھوگا۔۔۔جو رفیع رضآ نے اختیار کیا ھے۔۔
اب اگر۔۔۔۔۔۔۔ایک۔۔۔۔۔۔متحرک+ساکن۔۔۔۔۔۔۔کو ھم۔۔۔۔۔کسی نشان۔۔یا لفظ سے ظآھر کریں ؟ تو کیسا رھے گا۔۔۔۔۔؟۔۔
یعنی۔۔۔۔۔۔
متحرک+ساکن=====فَا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فَ ا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یا پھر۔۔۔۔۔۔۔۔لُن۔۔۔۔-۔۔۔یا پھر۔۔عِی۔۔۔۔عِ ی۔۔۔۔۔
اور اسی طرح۔۔۔۔فِعل۔۔۔۔۔–فِ ع ل۔۔۔۔==متحرک ، +ساکن+ساکن۔۔
متحرک ، +ساکن+ساکن۔۔====فِعل۔۔
اور ۔۔متحرک + متحرک+ساکن۔۔۔۔۔====مَفَا۔۔۔۔۔۔۔۔—==عِلُن۔۔۔
پس جو عربی کے الفاظ ھم ۔۔وزن کے لئے استعمال کرتے ھیں وُہ بے معنی الفاظ ھیں صرف۔۔حروف کے تلفظ کو ظآھر کرنے کے لئے ھم انہیں استعمال کرتے ھیں۔۔
اور ۔۔۔۔@@@@@سب سے اھم بات۔۔۔۔۔@@@@ یاد رکھیں۔@@@
شاعری میں الفاظ کا آھنگ یا صوتی تاثر یا تلفظ ھی ضرورت ھے۔۔۔۔حروف کی تعداد نہیں گنتے۔۔۔
یعنی۔۔۔۔۔۔۔۔لفظ ۔۔کیا، کیوں۔۔۔۔اصل میں۔۔۔کا۔۔اور کوُں ھیں اور کُوں==کُو۔۔۔۔۔ں کو نہیں بولنا۔۔۔
لفظ گُناہ ، کا تلفظ کیا بنے گا۔۔۔۔؟؟ گُ نَ ا ہ۔۔۔۔۔۔= متحرک،متحرک، ساکن ساکن
گُناہ==فَعُول۔۔۔-مَفَال۔۔۔۔== اُدھار۔==اُ دَ ار۔۔۔۔===خَیَال۔۔۔۔، فَصیل۔۔۔۔وغیرہ۔۔۔
پہلے سے ماھرین نے بحریں یا اوزان بنائے ھُوئے ھیں۔۔۔
مثلا۔۔۔۔
فَعلُن فَعلُن فَعلُن فَعلُن==متحرک۔ساکن۔۔متحرک ساکن۔۔متحرک ساکن۔۔۔۔۔وغیرہ
فَعلُن۔۔۔۔۔=فَع لُن۔۔۔۔۔۔===جَا لَا۔۔۔۔۔==کَر لے۔۔۔۔۔==سو جَا۔۔۔۔۔پی لو۔۔۔۔
اس بحر میں مصرعہ لکھیں۔۔۔
فَعلُن فَعلُن فَعلُن فَعلُن
فَعلُن۔۔۔۔ فَعلُن۔۔۔ فَعلُن۔۔۔۔۔ فَعلُن
دیکھا۔۔ ھم نے۔۔تارہ۔۔توڑا
آدھا،،،توڑآ، سارا تُوڑا۔۔۔
بھاگو بھاگو بلی آئی۔۔۔۔۔۔
کیسے۔۔۔۔اس کی تقطیع کرتے ھیں۔۔۔
بھَ ا۔۔۔گُ و۔۔۔۔۔۔بھَا گُو۔۔۔۔۔۔۔بِل لی۔۔۔۔۔۔آا ئی۔۔۔
دیکھا۔۔؟؟ ۔۔بلی۔۔میں دو لام ھیں کیونکہ ۔۔بلی متشدد ھے۔۔۔۔۔تو ھم آواز کو دیکھتے ھیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
اب دیکھیں۔۔۔۔۔
مَفا عِلُن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔=== مَفَا====خُدَا۔۔۔۔عِلُن۔۔بھی —خُدا۔۔۔
اگر وزن ھو۔۔۔۔کہ
خدا خدا ۔۔۔۔خدا خدا۔۔۔ خدا خدا۔۔۔۔۔۔۔خدا خدا۔۔۔۔ ۔۔۔یعنی چار مرتبہ
تو ھم مصرعہ لکھتے ھیں۔۔۔۔۔۔۔
چلو مرو ۔۔۔۔۔۔۔کدھر گئے۔۔۔۔ابھی تلک ۔۔مِلے نہیں۔۔۔
چَلو مَرو–خدا خدا۔۔۔
کِدَر گَئے۔۔۔ خدا خدا۔۔
اَبی۔۔تلک۔۔۔۔۔خدا خدا۔۔
مِلے ۔نئیں۔۔۔۔خدا خدا۔۔
خدا خدا کی بجائے۔۔۔۔بحر ھوتی ۔۔۔۔۔۔مَفَا عِلُن۔۔۔
جیسے۔۔۔۔
ابھی تو مَیں جوان ھُوں
ابی تُ مَ=====مفاعلن
جوا۔۔۔ن ُھوں۔۔۔۔مفاعلن۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب دیکھیں۔۔۔۔
فَعِلاتن۔۔۔۔۔۔۔–====فَ عِلا۔۔۔۔۔تَن۔۔۔
یہ خدا ھے۔۔۔۔۔— ===یِ خُدا۔۔۔ھے۔۔۔
نہ کسی کو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔— نَ کِسی ۔۔کو
مِرے دل پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔—==مِ۔۔ رِ دِل۔۔۔۔۔ پر۔۔۔۔–فعلاتن۔۔۔
لیکن۔۔۔۔اگر میں اس کو پڑھوں کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مَرے دل پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مِرِے۔۔۔۔۔دل پر۔۔۔۔
تو اس کا وزن ھے۔۔۔
مَفَا عی لُن۔۔۔۔۔۔۔-متحرک متحرک۔۔ساکن۔۔۔۔+ متحرک ساکن+ مُتحرک ساکن۔۔
اس طرح کے الفاظ کو کئی اوزان ھو سکتے ھین جو صوتی طور پر مُختلف ھوتے ھیں۔۔۔
اسی لئے کہا تھ ایاد رکھین صوتی۔۔۔۔اھمیت۔۔۔۔۔ھے شاعری میں۔۔
تو ۔۔پھر دیکھین۔۔۔مَرِے جن کے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مَ رِ ے۔۔۔۔۔۔جِن۔۔ کِے۔۔–==مفاعیلن۔
یا۔۔۔مَ۔۔ رِجِن۔۔۔۔۔۔کے۔====۔۔۔۔فَعِلاتن۔۔۔۔۔۔۔
آئیے پریکٹس کریں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فعلن فعلن======میرے۔۔۔۔۔بھاءی۔۔۔===پتھر توڑو۔۔۔۔۔لینا دینا۔۔۔۔تُم نے اُس نے۔۔۔
مَفَاعِلُن— خدا خدا۔۔۔۔۔۔چلے چلو۔۔۔ادھر اُدھر۔۔۔۔گلے مِلو۔۔۔ارے نہیں۔۔کہاں چلے۔غلط غلط۔
فَعِلاتن۔—-یہ تومیرا۔۔۔۔۔یہ تُمھارا۔۔۔۔نہ کسی نے۔۔۔مرے اندر۔۔۔۔ترے باھر۔۔۔۔۔۔
مَفَاعِیلن۔۔۔۔۔خدا آیا۔۔۔۔۔نہیں تُوڑا۔۔۔۔۔۔مرا دفتر۔۔۔۔چلو دیکھو۔۔اُٹھو پنجم۔۔۔ارے بابا۔۔میاں جاو۔۔
فعول فعول۔۔۔۔۔۔۔۔بُخار اُتار۔۔۔۔۔خیال سنبھال۔۔۔۔۔جناب شناب۔۔۔کتاب وقار۔۔۔۔رفیع رفیع
مفاعِلاتَن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خدا خدا تھا۔۔۔۔نہیں پتہ تھا۔۔۔۔اگر یہی ھے۔۔۔کہاں چلو گے، ادھر نہ جانا
مُستَفعِلُن۔۔۔۔۔۔۔۔مُس تَف۔۔عِلُن۔–جانا پڑا۔۔۔۔آیا نہیں۔۔۔توڑآ ُھوا۔۔سادہ توھے۔۔پتھر گِرا۔۔
فَاعِلان۔۔۔۔۔۔درمیان۔۔۔۔۔۔نو جوان۔۔۔۔۔دُلمیال۔۔۔۔جا اُتار۔۔۔۔۔زینہار۔۔۔۔۔۔بحساب۔۔۔۔
فاعلُن۔۔۔۔۔یہ کُھلا۔۔۔ھم نہیں۔۔جا پڑے۔۔گِر گیا۔۔۔۔سہہ لیا۔۔۔ھنس پڑا۔۔۔۔۔۔
فَعل۔۔۔۔۔۔۔۔فَ ع ل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جال،،،رحم۔۔۔۔۔پات۔۔۔ریت۔۔۔۔چُھوت۔۔۔رنج۔۔۔۔۔بھیج۔۔۔بھینچ۔۔۔گرم۔۔شرم۔۔
اور یہاں سے ھم آگے چلیں گے۔۔۔۔
آگے بڑھنے سے پہلے ان سبھی ارکان کی مثالیں دیکھ لیتے ہیں۔
فعلُن: پتھر، رشتہ،محفل، اڑنا، راکھی، سیرت، جانب
فعِلُن: ، رگِ جاں ،سرِ دَم۔ غمِ دل، شبِ غم، رہِ گم، سرِ رہ، درِ دل
فعول؛ ،بُخار، جماع،خیال، جواب، عروج، جوان، پڑوس
فعولُن؛ ۔، اشارہ، حسینوں،سمندر، مرا دل، گواہی، شہادت، ادھر آ، تمنا
فاعلُن؛ ، تُم چلو، رت جگا، دیکھنا، سامنا، روبرو، جستجو، جانِ من
مفعول؛ ، مردُود، منقار،اسرار، دستور، سیلاب، الزام، ہر روز
مفاعلُن؛ ، چلے چلو،سنبھالنا، جواب دے، نظر نظر، سوال ہے، بکھر گیا
فاعلات؛انتساب ،انتخاب، کامران، روک ٹوک، لا جواب، خون رنگ
مفاعیل؛ ، جوابات ،سوالات، سحرتاب، ترا ساتھ، بہت شوخ، مری جان
مفتعِلُن؛ آہِ سحر، چھوڑ گیا، اے شبِ غم، شاخ شجر، تیرِ ستم
فعِلاتن؛ غمِ جاناں، شبِ تیرہ، پسِ پردہ، لبِ دریا، سرِ محفل
مفاعیلن؛ تمنا ہے، نہ حسرت ہے، گزارا کر، نظر رکھنا، بدل جانا
فاعلاتن؛ کام دینا، سامنے ہے، دوسرا دن، ہر طرف سے، آسمانی
مستفعلُن؛ ہر رنگ میں، میری طرح، اچھا ہوا، دل توڑ کر، جائے کہاں
مفعولات؛ تیری ذات، اصلاحات، میری جان، نا منظور، میرے خواب
مفعولُن؛ دیواریں، بازاری، تنہائی، یہ دنیا، ملتا ہے، مجبوری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان الفاظ کے ھجے اور اوزان پر غور کریں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بُنیادی باتیں ھیں۔۔۔۔
۔
@@@ شاعری میں اوازان یا تقطیع۔۔۔الفاظ ، حروف سے نہیں۔۔۔آھنگ سے ھوتی ھے۔۔
یعنی۔۔۔۔۔۔اگر ۔۔۔مصرع ہے کہ۔۔۔
آخر اس درد کی دوا کیا ھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو ۔۔بحر۔۔۔۔۔فاعلاتن ، مفاعلن۔۔۔فعلن۔۔۔۔
میں تقطیع صوتی ھوگی۔۔
یعنی اسے ایسا پڑھیں گے۔۔
فاعلاتن۔۔۔۔۔۔آخرس در۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔الف کو دبا دیا۔۔۔۔۔ھے۔۔۔۔
د کی ۔دوا۔۔۔۔۔۔۔مفاعلن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔
کا ،ھے،،،،فعلن۔۔۔۔۔۔۔۔۔یعنی کیا–=کا——-فع=====
تو یُوں پڑھیں گے۔۔۔
آخرس در دکی دوا کا ھے۔۔۔۔۔
فعلاتن ، مفاعلن، فعلن۔۔۔۔
غور کریں کہ حروف متحرک ساکن کیسے ھوئے۔۔۔؟
فَا۔۔۔==آ
عِلَا۔=== خِِرَس۔۔۔۔۔
۔۔تَن۔۔=دَر۔۔۔
مَفَا ==دَکِی
عِلُن===دَوَا۔۔
فَع–== کَا۔۔۔
لُن-=== ھَے۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب۔۔۔۔۔۔ایک اور مصرع دیکھیں۔
دلِ ناداں تُجھے ھُوا کیا ھے
یہاں۔۔دلِ ناداں۔۔۔کے تو تلفظ یا ھجے ممکن ھیں
دلِ ناداں===مفاعیلن
دِ لِنا داں۔۔۔== فَعِلاتن۔۔
اور یہی ھُوا ھے غالب نے۔۔۔۔دُوسرے بیان کردہ تلفظ کو اس بحر میں باندھا ھے۔۔
دِ لِنا داں۔۔تُجھے ھُوا ۔کا ھے۔۔
فَعِلاتن، مفا۔۔۔عِلُن۔۔۔۔فع لُن۔۔
تو ایسے دونوں مصروں کی تقطیع ھم نے کر لی۔۔
دِ لِنا داں۔۔۔۔۔۔تُجھے ھُوا۔۔۔۔۔۔ ۔کا ھے
آخرس در۔۔۔۔۔ دکی دوا ۔۔۔۔۔ کا ھے۔۔۔
یاد رھے کہ۔۔۔۔۔مندرجہ ذیل الفاظ میں ی کو خاموش رھنا ھے۔۔۔
کیا، کیوں،
=== کا۔۔کُوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کے علاوہ۔۔۔۔۔۔ں نُوں غنہ بھی پڑھا نہیں جاتا۔۔۔یعنی تقطیع میں اس کی اھمیت کوءی نہیں۔۔۔
آگے بڑھنے سے پہلے ان سبھی ارکاں کی مثالیں دیکھ لیتے ہیں۔
فعلُن: محفل، اڑنا، راکھی، سیرت، جانب
فعِلُن: غمِ دل، شبِ غم، رہِ گم، سرِ رہ، درِ دل
فعول؛ خیال، جواب، عروج، جوان، پڑوس
فعولُن؛ سمندر، مرا دل، گواہی، شہادت، ادھر آ، تمنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بحروں کے اراکین۔۔۔۔یا زحافات

۱۔ فعولن
۲۔ فاعلن
۳۔ مفاعیلن
۴۔ فاعلاتن
۵۔ مستفعلن
۶۔ مفعولات
۷۔ متفاعلن
۸۔ مفاعلتن
انہیں آٹھ افاعیل کی مخلتف ترتیبوں سے بحریں بنتی ہیں، اور ان بحروں میں شعر کہنا لازم ہوتا ہے۔
کچھ مفرد بحریں ہوتی ہیں کہ جن میں ایک ہی افاعیل کی تکرار ہوتی ہے جیسے بحر متقارب (جو اس تھریڈ میں تفصیل سے زیرِ بحث رہی ہے) اس میں فعولن کی تکرار ہے یعنی مثمن میں فعولن فعولن فعولن فعولن ہے۔ جو بھی شعر ان افاعیل کے وزن پر کہا جائے گا اسے بحر متقارب میں کہا ہوا شعر کہیں گے۔
اسی طرح ایک اور مفرد بحر ہے، بحر ہزج اس میں مفاعیلن کی تکرار ہوتی ہے (بحر ہزج مثمن سالم کا وزن ہوگا، مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن)۔
کچھ مرکب بحریں ہوتی ہیں جن میں ایک افاعیل کی بجائے دو اراکین کی تکرار ہوتی ہے جیسے بحر مضارع مثمن سالم کا وزن ہے مفاعیلن فاعلاتن مفاعیلن فاعلاتن، یعنی اس میں دو مختلف افاعیل آ گئے ہیں سو مرکب ہے۔
اس طرح کل ملا کر (مفرد اور مرکب) انیس بحریں بنتی ہیں جن میں سے کچھ اردو میں استعمال ہوتی ہیں اور کچھ نہیں ہوتیں جیسے بحر وافر جو کہ مفرد بحر ہے اور اسکا وزن مفاعلتن مفاعلتن مفاعلتن مفاعلتن ہے لیکن اردو میں اس میں شعر نہیں کہے جاتے کہ اسکا مزاج سراسر عربی اور فارسی کا ہے، اور اگر اردو میں کوئی شعر ہے بھی تو بطور مثال کے۔
لیکن بات یہیں ختم نہیں ہوتی۔
اوپر جو آٹھ افاعیل دیئے گئے ہیں ان میں ایک خاص ترتیب اور انداز سے حروف کی کمی بیشی کرنے سے کچھ نئے وزن اور افاعیل حاصل ہوتے ہیں، اس کمی بیشی کے عمل کو زحاف یا زحافات کہتے ہیں اور ان سے بے شمار اوزان اور بے شمار بحریں حاصل ہوتی ہیں اور یہی عروض کا مشکل ترین حصہ ہے۔ اور ہر زحاف اور ہر بحر کا ایک الگ نام بھی ہوتا ہے۔
مثال کے طور پر ایک رکن ‘مفاعیلن’ پر زحافات کے عمل سے اٹھارہ نئ صورتیں حاصل ہوتی ہیں اور ان سے بننے والی بحر ہزج کے 35 ذیلی صورتیں بحر الفصاحت میں بیان کی گئی ہیں۔
کچھ مثالیں لکھتا ہوں۔
مفاعیلن کے اگر آخری دو حرف گرا دیں تو اس زحاف کو حذف کہتے ہیں، اسے سے ‘مفاعی’ بچتا ہے جسے فعولن بنا لیتے ہیں۔
اگر پہلا حرف ‘م’ ختم کر دیں تو فاعیلن بچتا ہے جسے ‘مفعولن’ بنا لیتے ہیں۔ (اس زخاف کو خرم بروزنِ شرم کہتے ہیں)
اسی طرح مفاعیلن پر زحافات کے عمل سے جو وزن حاصل ہوتے ہیں ان میں، مفاعیل، مفاعلن، فاعلن، مفعول، فعول، فعل، فاع، فع، مفاعیلان، مفعولان، فعلن وغیرہ وغیرہ حاصل ہوتے ہیں اور پھر ان سے بحریں بنتی ہیں جیسے
مفعول مفاعیلن مفعول مفاعیلن
مفاعلن مفاعیلن مفاعلن مفاعیلن
فاعلن مفاعیلن فاعلن مفاعیلن
مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن
مفعول مفاعیل مفاعیل مفاعیل
وغیرہ وغیرہ
مزید برآں، اسی ایک رکن ‘مفاعیلن’ کی مختلف صورتوں (یعنی بحر ہزج ہی سے) رباعی کے چوبیس وزن بھی نکلتے ہیں۔
اور یوں آٹھ افاعیل کی مختلف صورتوں سے سینکڑوں بحریں بنتی ہیں، لیکن عملی طور پر، ایک رپورٹ کے مطابق، صرف ساٹھ ستر بحریں ہی عربی، فارسی اور اردو شاعروں کے مستقل استعمال میں رہی ہیں۔ اردو شاعری کی تاریخ میں تقریباً چالیس بحریں استعمال ہوئی ہیں، اور دیوانِ غالب میں غالب کے استعمال میں آنے والی بحروں کی تعداد انیس یا بیس ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شاعری میں دو باتیں اھم ترین ھیں۔
1۔ شعریت
2۔ ترسیل
شعریت، ندرت،و پیش کاری ، اور تاثیر سے آتی ھے
لیکن ترسیل کے بغیر سب بیکار ھو جائے گا۔
آج کی شاعری پر نظر ڈالیں تو، صاف نظر آتا ھے کہ خیال کی ترسیل کردی جاتی ھے اور اسے کافی سمجھا جاتا ھے۔ بات کہہ دینا یا وزن میں بات کہہ دینا ھی شاعری نہیں ھوتا۔
اصل بات شعریت کی ھے ، اور شعریت جیسے اوپر بیان کیا ھے، اندازِ بیان، الفاظ کا چناو، پیش کاری، تاثیر ۔۔۔سے آتی ھے۔۔۔
اب بہت سے پرانے لکھنے والے ایک ھی نہج پر شعریت سے عاری اشعار لکھتے جاتے ھیں اور سمجھتے ھیں کی تغزل بھری بات کہہ دی ھے جو خود کو دھوکہ دینے کے مترادف ھے۔
نئے لکھنے والے جب ندرت لانے کی کوشش کرتے ھیں تو ڈرامئی اور غیرممکن تعلیات کو شاعری کا نیا تغزل سمجھتے ھیں، لیکن مشاھداتی تجربہ ھمین بتاتا ھے کہ یہ بھی شعریت سے عاری کوشش ھے۔۔۔
پس شعریت لانے کے لئے ندرتِ خیال کے علاوہ ندرت پیش کاری بھی درکار ھے۔ ساتھ میں روایتی تغزل ھو تو مکمل شعر وجود میں آتا ھے۔
فکری سطح پر دقیق اشعار ، درحقیقت پست درجہ رکھتے ھیں۔
جب شاعری کا فن ھی پیش کاری کی بہترین بنیاد پر ایستادہ ھے تو پیش کاری و ترسیل کے بغیر کوئی فن پارہ کیا اھمیت رکھے گا۔۔ اس لئے خوش فہمی سے نکل آنا ھی بہتر ھے
نئے اور پرانے دونوں سطح کے شُعرا، کی شاعری ، زیادہ تر مایوس کُن کلیشیائی خیالات سے بھری ملتی ھے،
چند ایک احباب و خواتین اپنا رستہ الگ بنا رھے ھیں۔۔۔جو قابلِ تعریف بات ھے۔۔
لیکن کچھ پرانے شعرا جو دوستوں میں بھی شامل ھیں، لکیر پیٹے جاتے ھیں، ایسے دوست ناقابلِ علاج ھیں جو اپنی شاعری میں نئے مضامین لانے سے اس لئے قاصر ھیں کہ وُہ مطالعہ نہیں کرتے اور اپنے ھزاروں پرانے اشعار کا حوالہ دیکر ، ناصح کو چپ کرانے کی کوشش کرتے ھیں۔
اب پنجابی یا سرائیکی یا بلوچ یا سندھی اردو شاعر کو کیا مصیبت پڑی ھے کہ میرؔ تقی کی متروک زبان میں شاعری کا چُھدؔا ھمارے سر پر لادے؟
عجب مسئلہ ھے کہ ایسے دوست شعرا یہ سمجھنے سے قاصر ھیں، کہ میاں ! یہ شاعری ،،،صرف وزن پورا کرنے والی بیکار کوشش ھے۔۔۔
نیا مضمون لاو۔۔۔موجود کے نئے مضامین باندھو۔۔۔۔پھر دیکھیں ۔۔گے۔۔۔۔
میرا ایسے دوستوں کو چیلینج ھے موجود کے مضامین موجود کی زبان میں باندھ کر دکھاو۔۔۔۔ جن دوستوں نے یہ سمجھا ھُوا کہ انہیں موسیقی کے چند راگ اور شاعری کی اصناف پر پورا عبور ھے۔۔۔اور اب انہیں باقی علوم کی کوئی ضرورت نہیں وُہ صرف کنویں کے مینڈک ھیں۔ اور اسے سمندر سمجھ رھے ھیں۔۔

میں دلیل سے یہ ثابت کر سکتا ھُوں کہ طب، فلسفہ، کیمیا، طبیعات، اور تاریخ کے کثیر مطالعے کے بغیر شاعری کھوکھلی سطحی اور بیکار ھوتی چلی جاتی ھے۔
جس کو ذرہ برابر اختلاف ھو وہ ابھی مجھ سے یہاں دلیل اور امثال کے ساتھ بحث کرسکتا ھے۔۔بغیر دلیل کے نہیں۔۔۔ کیونکہ وقت ضائع کرنے کا کوئی فائدہ نہیں۔

میرے ھمراہ کچھ لوگ جس عصری شعور سےبھری تنقید کی کمی کا رونا روتے ھیں، اُس سے ناواقفیت خود ھمارے لکھنے والوں میں پائی گئی ھے ۔قاری تووہ شاگرد ھوتا ھے جسکی تربیت لکھنے والا ھی کرتا ھے۔
میں نے جو غزل تنقید کے پیش کی تھی اور مکمل پرخچے اُڑانے کا چیلنج دیا تھا اُسئ بہت سے لکھاریوں نے پسند اور ناپسند کے عمومی نصابی تنقید و تنقیص کے پیمانے پر یا تو پسند کر لیا یا ناپسند کر دیا۔۔
یہ لمحہ فکریہ بنتا ھے کہ خود لکھاری جو شاعر ھے ادیب ھے صحافی ھے وہ بھی کیا کسی تخلیق کے نقائص کو دلیل و مثال سے ثابت نہیں کر سکتا؟۔۔یعنی کسی بھی تخلیق کا تنقید جائزہ جن بنیادی اصولوں کے گرد گھومنا چائیے ان میں سے کچھ نیچے درج ھیں
۔
نمبر 1۔۔۔۔فنی طور پر گرفت
نمبر 2،، ھیئت کی خوبی و خرابی
۔۔نمبر 3،،،،کرافٹ میں تجربہ،،، بیانیہ واضح یا مبہم
نمبر 4۔۔۔ جگالی زدہ مضامین۔۔۔کی موجود گی ، ناموجودگی۔۔۔
نمبر 5۔۔۔ اگر جگالی زدہ مضامین ھیں تو ،،ان میں جدت یا محض جگالی
نمبر 6۔۔رُوحِ عصر سے میل کھاتی کوئی بات کوئی اشارہ؟
نمبر 7۔۔۔ کوئی عام مشاھدہ۔۔نئے انداز سے۔۔کوئی سائینسی حقیقت؟
نمبر 8۔۔کوئی معاشرتی مسئلہ۔۔۔ اس پر اصرار و انکار۔؟
نمبر 9۔۔۔کوئی ریاستی ، یا بین الریاست اھم نکتہ۔۔۔
نمبر 10۔۔شعریت کی عمومی موجودگی
نمبر 11،،ترنم کی کمی یا زیادتی۔۔
نمبر 12۔۔کوئی نئی ترکیب۔۔۔یا پرانی ترکیب کی نئی سمت۔۔
نمبر 13۔۔کوئی جدید لفظ ۔۔؟ غیر کلاسیکی لفظ؟
نمبر 14۔۔ شاعر کی اپنی شعوری یا لاشعوری پہچان کراتی کوئی سمت ، انداز۔
نمبر 15۔۔شاعر و معاشرے کی کُل سائیکی کا عکس؟
نمبر 16۔۔لفظی مباشرتی بنت یا الفاظ کی ماھیت سے شاعری کی واقفیت اور برتاو
نمبر 17۔۔ زمین کا چناو،،، پہلے سے استعمال کردہ یا ۔۔پٹا یا نہ مِٹا ھونا۔۔
نمبر 18۔۔ مضامین کا پٹا یا نہ نیا پن۔۔
نمبر 19۔۔ مضموعی غزل کا میلان۔۔
نمبر 20۔۔۔۔مجموعی غزل کا آخری تاثر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ وہ بنیادی نکات ھیں جن پر جدید تنقید قائم ھوتی ھے۔۔ شاعری ایک ھنرِ پیشکاری ھے۔۔ خارجی جمالیات اور داخلی محسوسات اور جاذبیت کتنی فطری ھے کتنی مصنوعی ھے۔۔یہ دیکھنا بہت اھم ھے۔۔ اس لئے تین تجرباتی اشعار بھی اُسی طرح درج کئے تھے۔۔ جیسے خبریہ انداز ھوتا ھے۔۔
دیکھنا تھا کہ شعریت اور سپاٹ خبر میں لوگ کیسے امتیاز کرتے ھیں۔
اگر چہ اُن اصحاب و خواتین کا شکریہ جنہوں نے محض ایک پیراگراف بغیر تفصیل میں جائے عمومی پسند و ناپسند کا اظہار کیا۔ لیکن ان سے امید و تقاضہ آئیندہ یہی رھے گا کہ ھر شعر پر گفتگو اس لئے کریں کہ ھر شعر اپنی جگہ ایک الگ اینٹیٹی ھوتا ھے۔۔
اور مجموعی پر اسلئے ضرور بات کریں کہ غزلِ مسلسل کو بھی ھم رواج دے رھے ھیں۔
باوجود منع کرنے کے۔۔ذاتی کمنٹس پھر آ موجود ھوئے۔۔۔جو حیران کن اور مایوس کُن بات ھے۔۔تاھم یہ بھی ھمین ھمارے قاری و لکھاری کی نفسیات سے واقف کرتا ھے۔
میری اپنے معیار کے مطابق غزل میں کوئی بہت بڑا شعر نہیں ھو سکا۔۔۔
دو تین اشعار،،شعریت لئے ھوئے ھیں۔ جو غزل کا عمومی مزاج ھے۔۔
مطلع کو کچھ لوگ سمجھے اور کچھ نہین سمجھے،،اسکی وجہ بھی میرا اپنا ارادہ تھا۔۔کیونکہ پاکستان کے ماحول پر مطلع کہتے ھوئے اخفا ھی درکار ھوتا ھے۔مرغانِ گرفتار۔۔۔۔اور ھم پرندے ۔۔کے عظیم فرق کو جو نہین سمجھے انہیں ایک سبق کے طور پر یاد رکھنا چاھئیے۔ جو مرغان گرفتار ھیں۔۔۔ انکے سوا جو گرفتار نہیں۔۔ انہیں۔۔۔صرف مرغان یا پرندے ھی کہا جانا کافی تھا۔۔۔اور ھم۔۔۔۔ ساتھ لگا کر ایک گروہ بنایا ھے جو فراری ھے۔۔ اشجار،،کی کمی والا شعر نہایت محنت سے کہا گیا تھا۔۔ جس تک سب نہین پہنچے جو سخت افسوسناک بات ھے۔ پاکستان سمیت دنیا میں درختوں کی کمی اور ھاوسنگ کے بڑھنے سے ماحول میں گرمی کا بڑھنا ایک نہایت اھم مسئلہ ھے۔۔۔اگر ھم نئے مضامین نہ لائیں تو ۔۔۔ غزل لکھنا چھوڑ دینا چاھئیے۔ قبروں والے ایہامیہ شعر کو سپاٹ دینے والے اس پر پھر غور کر سکتے ھین کیونکہ جنہوں نے اسکا درست مفہوم نکالا ھے وہ کیسے اس پر قادر ھوئے۔۔۔ اسی طرح مسجدوں اور ھسپتالوں میں جانے والون کو بیمار کہنا ناپسند کرنا، مذھبی بنیاد پرستی سے جڑا ھو سکتا ھے ادب سے نہین۔۔کیونکہ ۔۔غزل میں۔۔۔ تیرا بیمار۔۔۔۔ بیمارِ عشق،،عام رائج بات ھے۔۔ خیر تمام تبصرہ کنندگان کا شکریہ۔۔۔۔ تاھم۔۔۔جو نکات اوپر بیان کئے تھے انکے استعمال سے اگر اگلی غزل پر تنقید ھو تو بہت بہتری کی جانب ھم قدم اُٹھائیں گے۔
کچھ حروف علت کے بارے مین بھی پڑھ لیں
حروف علت اور تقطیع

حروفِ علت : ان سے مراد تین حروف ہیں ، واؤ ، الف ، یاء
انگریزی میں انہیں واولز کہا جاتا ہے ۔اردو میں یہ زبر ،پیش اور زیر کی حرکات کے قائم مقام ہیں۔

آئیے باری باری اب تینوں حروف کے احکام مختصراً پڑھتے ہیں


الف کا بیان:-

الف بطورِ پہلا حرف:-
ایک مصرع اگر ایسا ہو کہ اس میں کوئی ایسا لفظ جو مصرع کے آغاز میں نہ ہو تووہاں الف کا گرانا جائز ہے ۔اور ایسی صورت میں اسے الف موصولہ کہا جاتا ہے ۔ یہ تو ظاہر ہے کہ مصرع کے آغاز میں آنے والی کوئی الف الف موصولہ نہیں ہو سکتی۔

مثلا:-
ہم اُس کے ہیں ہمارا پوچھنا کیا
اس الف کو "س” کے ساتھ ملا کر یوں بھی پڑھ سکتے ہیں ، ہمُس کے —- الخ

اس گر جانے والے الف کو الف موصولہ کہتے ہیں ۔اور توجہ سے دیکھئے کہ یہ دوسرے لفظ کا پہلا حرف ہے

ہم نے اس سے پہلے یہ طے کیا ہے کہ الف اگر شروع کلمہ یا لفظ میں آئے بشرطیکہ وہ مصرع کا پہلا لفظ نہ ہو تو اسے گرایا جا سکتا ہے کیونکہ وہ خود گر کر اپنی حرکت اپنے سے پہلے حرف کو منتقل کر دیتا ہے ۔جیسے کہ "ہم”کی ساکن میم کے ساتھ ہوا۔
لیکن یہاں ایک اور بات سمجھنے کی ہے ۔الف ضروری نہیں کہ لفظ کا پہلا حرف ہی ہو ۔یہ پہلا،درمیانی یا آخری کوئی حرف بھی ہو سکتا ہے ۔تو پھر کیا ہو گا؟؟

الف بطورِ درمیانی حرف:-
سب سے اہم بات اس سلسلے میں یاد رکھنے والی یہ ہے کہ اگرالف کسی لفظ کے درمیان یا وسط میں واقع ہو تو اسے ماسوائے چند الفاظ کے ہرگز ساقط نہیں کیا جا سکتا ۔کیونکہ ایسا کرنے سے اس لفظ کی شکل اس طرح بدل سکتی ہے کہ اس کے معنی ہی بدل جائیں ۔ذرا تصور کریں ۔اگر لفظِ "حال” کا وسطی الف گرا دیا جائے تو وہ لفظِ "حل” میں تبدیل ہو جائے گا اور شعر یا تو مہمل ہو جائے گایا اس کے معانی ہی بدل جائیں گے. اسی طرح لفظِ جان ، سال ، دال ، وغیرہ ہیں

صرف کچھ الفاظ ایسے ہیں جن میں وسطی الف کو ساقط کرنے سے ان کے معانی نہیں بدلتے اور وہ الفاظ مندرجہ ذیل ہیں۔
گناہ سے گنہ
سیاہ سے سیَہ
راہ سے رہ
تباہ سے تبہ
اور
سپاہ سے سپہ پڑھا اور لکھا بھی جاتا ہے

بہر حال کسی بھی لفظ کے درمیانی الف کو گرانے کے سلسلے میں بنیادی اصول یہ یاد رکھئےے کہ اگر اس الف کو گرانے سے لفظ کی ہیئت اس طرح بدلتی ہو کہ اس کے معنی بدل جائیں تو اس کی قطعا اجازت نہیں ۔مثلاًایک لفظ ہے "کاہ” جس کا مطلب گھاس کا تنکا ہوتا ہے۔اس کا الف گرا دیا جائے تو وہ لفظ”کہ” میں تبدیل ہوجائےگاجو وضاحت کرنے کے لئے استعمال ہوتا ہے۔اس طرح کی صورتحال میں درمیانی الف کا گرانا ممنوع ہے۔

اوپر کچھ امثال درمیانی الف گرانے کی دی گئی ہیں ۔ان میں ایک بات نوٹ کیجئے کہ رہ،گنہ اور ان سے ملتے جلتے الفاظ میں جہاں الف گرایا گیا ہو ۔ہ مختفی کی آواز صاف سنائی دیتی ہے۔

الف بطور آخری حرف:-
اس مقام پر آپ کو یہ علم ہونا چاہئے کہ مصدر کیا ہوتا ہے اور فعل کسے کہتے ہیں۔تب ہی آپ اس الف کو گرانے یا نہ گرانے کے بارے میں سمجھ سکیں گے۔

مصدر:-
کسی لفظ کی اصل بنیاد کو کہتے ہیں ۔جس سے اس لفظ کے افعال اور دیگر صیغے مشتق ہوتے ہیں۔اردو میں اس کی پہچان یہ ہے کہ جس لفظ کے آخر میں ( نا) آئے وہ مصدر کہلاتا ہے ۔مثلا ً :-
کرنا ،ہونا ،جانا، وغیرہ

فعل:-
اس کلمے کو کہتے ہیں جس میں کسی کام کا ہونا ،کرنا یا سہنا بہ اعتبارِ وقت پایا جائے۔مثلاً :-
کیا ، کرتا ہے ، کرے گا، کرے ، وغیرہ

مصدر اور فعل کی تعریف جان لینے کے بعد اب آپ آخری الف کے بارے میں یہ سمجھ لیں کہ یہ گر تو سکتا ہے مگر اس کا گرانا ناگوار اور ممنوع سمجھا جاتا ہے ۔مگر جب آپ مشق کریں تو بے شک گرا لیں مگر ایسا کرنا جائز نہیں سمجھا جاتا – اسے ان امثال سے سمجھنے کی کوشش کریں۔

مصدر میں الف بطور آخری حرف کی مثالی یہ دیکھیں کہ :-
خاک بھی ہوتا تو خاکِ درِ جاناں ہوتا۔

اس مثال میں پہلا والا "ہوتا” مصدری لفظ ہے جس کے آخر کا الف گرایا گیا ہے اور جو اب پڑھنے میں اگلے حرف کے ساتھ مل کر "تتو” کی آواز دے کر ناگوار فضا پیدا کر رہا ہے۔یعنی : خاک بھی ہو تَ تو خاک در جاناں ہوتا۔ یعنیٰ ہوتتو — بن جاتا ہے

فعل میں الف بطور آخری حرف:-
مثلاً یہ جملہ دیکھیں :- "اس نےبھیجا ہے مرے خط کا جواب”
اس میں بھیجا کا لفظ فعل کو ظاہر کر رہا ہے ۔مگر جب بھیجا کا الف ساقط ہو گا تو اس کی آواز کچھ ایسے نکلے گی "اس نےبھیجَ ہےمرے خط کاجواب.

میرا خیال ہے کہ اب آپ اس بات کو سمجھ گئے ہوں گے کہ مصادر و افعال کا آخری حرف گرانا کیوں معیوب ہے ۔


حرفِ "واؤ” کا بیان:-

یہ حرف بنیادی طور پر پیش ُ کی حرکت کا قائم مقام ہے۔ چونکہ یہ ایک ایسا حرف ہے ۔جس کی کئی اقسام ہیں ۔اس لئے سب سے پہلے ہمیں یہ علم ہونا چاہئے کہ اس ایک حرف کی کئی اقسام کیوں ہیں ۔اگر ہم اس الجھن کا شکار ہو گئے کہ ایک حرف کی کئی اقسام کیسے ہو سکتی ہیں تو پھر ہم اس کے بارے میں ہماری سمجھ کسی ٹھکانے نہیں لگنے والی تو اقسام سے مراد یہ ہے کہ یہ حرف ہماری زبان کے جس لفظ میں استعمال ہو ۔وہاں اس کی آواز کسی دوسرے لفظ سے مختلف ہوتی ہے ۔کیونکہ ہماری زبان بہت سی زبانوں سے مل کر بنی ہے ۔اس لئے جس زبان سے بھی ایک لفظ حرفِ "واؤ” کے ساتھ اردو میں آیا ہے ۔وہ اُس زبان کے لہجے کے مطابق یا تو اپنی آواز ساتھ لایا ہے یا پھر مقامی سطح پر اس نے اپنی الگ آواز اختیار کر لی ہے۔ان آوازوں میں امتیاز کرنے کے لئے علماے اردو نے ان کے لئے پانچ اصطلاحیں وضع کی ہیں ۔عمومی دلچسپی کے لئے میں ان اصطلاحوں یا اقسام کے نام لکھ دیتا ہوں :-
1- واؤ معدولہ
2واؤ معروف
3۔واؤمجہول
4۔واؤ لین
5۔واؤ عاطفہ
6۔واؤ مخلوط

چھ اقسام کے یہ واؤبارہ طریقوں سےاستعمال میں آتے ہیں ۔لیکن آپ کو اس ابتدائی سطح پر اس جھمیلے میں پڑنے کی ضرورت نہیں- آپ فی الحال وہ سیکھئے جو میں سکھا رہا ہوں۔

1–اگر واؤسے کوئی لفظ شروع ہوتا ہے تو ظاہر ہے کہ وہ واؤ نہیں گر سکتا ورنہ لفظ ہی غلط ہو جائے گا یا اس کے معنی بدل جائیں گے ۔مثلا اگر وقت کا واؤ ساقط کر دیا جائے تو کچھ نہیں بچے گا ۔اسی طرح لفظِ "وہم ” کو لیجئے ۔اگر و اؤساقط کر دیا جائے تو ہم بچے گا ۔جس کا وہم کے معنی سے کوئی تعلق نہیں ۔اس لئے یہ سمجھ لیجئے کہ جو لفظ حرفَ واؤ سے شروع ہو اس کا پہلا واؤکسی صورت نہیں گر سکتا

2–اسی طرح اگر حرفِ واؤ کسی لفظ کے وسط میں آئے تو اسے بھی ساقط نہیں کیا جا سکتا ۔مثلاً :
اگر قوم ، یوم ، بول کا درمیانی واؤ ساقط کر دیا جائے تو ان الفاظ کے معانی ہی بدل جائیں گے

3– کسی لفظ کے درمیان موجود صرف وہی و اؤتقطیع میں گرتا ہے جو لکھنے میں تو آئے مگر بولنے میں نہ آئے ۔جیسے لفظِ خوشبو میں ، یا لفظِ "اور” میں جبکہ یہ عطف کے لیے ہو

4– آخر کلمہ یا لفظ کے ہر واؤ کو ساقط کیا جاسکتا ہے۔یہ الگ بحث ہے کہ وہ کہاں معیوب ہے یا ناگوار ہے۔لیکن اصول یہی سامنے رہنا چاہئے کہ اسے گرایا جا سکتا ہے ۔علما نے فارسی الفاظ مثلا خوشبواورگفتگو جیسے الفاظ کو گرانے کی سخت ممانعت کی ہے ۔کیونکہ ایسا کرنے سے یا تو وہ بے معنی ہو جاتے ہیں یا ان کے معانی بدل جاتے ہیں۔مگر یہ ایک طویل بحث ہے ۔آُپ عروض میں مہارت حاصل کرنے تک اور اس سطح پر صرف یہ یاد رکھیں کہ آخری واؤ کو گرایا جا سکتا ہے ۔

5– اسی طرح اگر کسی لفظ میں جس میں و اؤنون غنہ سے پہلے ہو ۔ جو عام طور پر جمع الجمع کی شکل میں ہوتا ہے۔۔جیسے لوگوں –
عام طور پر اسے گرانا اچھا نہیں سمجھا جاتا کیونکہ پھر لوگوں کا لفظ لوگ میں بدل جائے گا ۔مگر لوگوں چونکہ جمع الجمع ہے اس لئے اسے گرانے پر کوئی پابندی نہیں۔


حرفِ "یاء” کا بیان:-

حروف علت میں آخری حرف "ی” ہے۔جس کے بارے میں یہ جان لیجئے کہ اس حرف کی اقسام کے لئے بھی علما نے اصطلاحات وضع کر رکھی ہین ۔جنہیں جاننا قطعی لازم نہیں مگر اُن کی آوازوں کو پہچاننا ضروری ہے۔بہر حال میں عمومی دلچسپی کے پیش نظر ان میں سے کچھ کے نام لکھ دیتا ہوں:-
1–یائے معروفی
2–یائے مجہول
3–یائےلین
4–یائے مخلوطی
5–یائے ہندی

حرفِ ی کے سلسلے میں ایک بہت اہم بات جان لیجئے کہ ایک مصرعے میں ی کو لمبی آواز دے کر یعنی پورےرکن کے طور پر بھی پڑھا جا سکتا ہے اورچھوٹی آواز سے بھی ۔یہ شعر یا مصرع کی بحر طے کرتی ہے کہ اسے کس طرح پڑھا جائے۔

اب آئیے اس کو گرانے کی طرف:-

1–یہ طے ہے کہ اگر کوئی لفظ ی سے شروع ہوگا تو اس کی ی نہیں گرائی جا سکتی۔
2–ہندی کے علاوہ دوسرے الفاظ کی درمیانی ی گرانے سے اگر اس لفظ کے معنی پر کوئی اثر نہ پڑتا ہو تو بلا کھٹکے گرائی جا سکتی ہے
3– ہندی اسماء کی درمیانی ی کو گرانا لازم نہیں مگر مستحسن ہے۔
4–افعال کی ی کو گراتے ہوئے بھی یہ دیکھنا چاہئے کہ کہیں وہ معنی پر اثر انداز تو نہیں ہو رہی۔
5–ہر لفظ کی آخری ی کو بلا خطر گرایا جا سکتا ہے بشرطیکہ وہ معانی کو متاثر نہ کرے۔
6– بے بمعنی بغیر خی ی گرانا درست نہیں اسی طرح حرف ندا جیسے "اے” کی ی کو گرانا ممنوع ہے۔
7۔مرکب افعال، جیسے، پی گیا ، سی لیا— ان کی بھی ی اجازت ہونے کے باوجود گرانے سے احتراز کرنا چاہئے۔
رفیع رضا